آسام

گواہاٹی میں این آر سی کے خلاف اے بی وی پی کارکنوں کا مظاہرہ (فوٹو بہ شکریہ : نیٹورک 18 آسام)

آسام: این آر سی کے خلاف اے بی وی پی کامظاہرہ، کہا-اصل باشندوں کے نام چھوٹے

این آر سی کی اشاعت کو آگے بڑھانے کی مانگ کرتے ہوئے اے بی وی پی نے کہا کہ موجودہ فہرست میں بہت سے اصل باشندوں کے نام چھوٹے ہیں اور غیر قانونی مہاجروں کے نام جوڑے گئے ہیں۔ جب تک اس کو دوبارہ تصدیق کر کے سو فیصد خامیاں دور نہیں کی جاتی، اس کی اشاعت نہیں ہونی چاہیے۔

سپریم کورٹ (فوٹو : پی ٹی آئی)

ہمیں تنقید کی پرواہ نہیں،31 اگست تک این آر سی شائع کرنا ہی ہوگا: سپریم کورٹ

سپریم کورٹ نے کہا،’ہماراحکم اور ہماری کارروائی ہر لمحہ بحث اور تنقید کا موضوع ہوتی ہے۔ ہم اس سے بدحواس نہیں ہوتے۔ اگر ہم اس پر غور کریں‌گے تو ہم کبھی بھی اپنا کام پورا نہیں کر سکیں‌گے۔ ‘

Hindutva_Reuters-1

اگر یہ ہندو راشٹر نہیں ہے تو اور کیا ہے؟

لبرل دانشور جماعت کے لئے ہندوستان بھلےہی اب تک ہندو راشٹر نہ بنا ہو، لیکن گلیوں میں گھومنے والے ہندتووادیوں کے لئے یہ ایک ہندو راشٹر ہے۔ اس کی علامت بھلے چھپی ہوئی ہوں، لیکن اس کے حمایتی اور متاثرین، دونوں ہی بہت واضح طور پر اس کا تجربہ کر سکتے ہیں۔

AKMC 19 July.00_12_51_11.Still002

اپوروانند کی ماسٹر کلاس: میاں جب خود کو میاں کہتے ہیں تو کس کو غصہ آتا ہے؟

ویڈیو: نظم کا ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر ڈالے جانے کے بعد ’میں میاں ہوں‘نظم کے تخلیق کار حافظ احمد سمیت 10 لوگوں پر ایف آئی آر درج کی گئی۔ ان لوگوں پر اپنی نظموں کے ذریعے آسام کے این آر سی اور آسام کے لوگوں کے تئیں نفرت اور تعصب رکھنے کا الزام لگایا گیا ہے۔آج کی ماسٹر کلاس میں اس مدعے پر پروفیسر اپوروانند کا نظریہ۔

امت شاہ (فوٹو : پی ٹی آئی)

دوسرے حصوں میں نافذ ہوگا این آر سی، ملک کی ایک-ایک انچ زمین سے غیر قانونی مہاجروں کو باہر کریں‌ گے: امت شاہ

مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے راجیہ سبھا میں کہا کہ ملک کی ایک ایک انچ زمین پر جو غیر قانونی مہاجر رہتے ہیں، ہم ان کی پہچان کریں‌گے اور عالمی قوانین کے تحت ان کو ملک سے باہر کریں‌گے۔

علامتی تصویر(فوٹو : رائٹرس)

پورے ملک میں پولیس فورس  کے 5.28 لاکھ عہدے خالی، اترپردیش میں سب سے زیادہ

وزارت داخلہ کے اعداد و شمار کے مطابق، سب سے زیادہ تقریباً 1.29 لاکھ عہدے اتر پردیش میں، بہار میں 50000 عہدے اور مغربی بنگال میں 49000 عہدے خالی ہیں۔ وہیں، ناگالینڈ پولیس ملک کی واحد ایسی فورس ہے، جہاں طے شدہ تعداد سے 941 زیادہ ملازمین‎ کو بھرتی کیا گیا ہے۔

Assam-Barpeta

آسام: مسلم نو جوانوں کو پیٹا، جبراً جئے شری رام، پاکستان مردہ باد کے نعرے لگوائے

یہ معاملہ آسام کے بارپیٹا کا ہے۔ 18 جون کورائٹ ونگ کے کچھ گروپ کے لوگوں نے آٹورکشہ روک‌کر اس میں سوار مسلم کمیونٹی کے کچھ لوگوں کی مبینہ طور پر پٹائی کی۔ اس معاملے میں دو ایف آئی آر درج کی گئی ہیں۔

nrc

کیا بی جے پی 2024 کا الیکشن این آر سی پر لڑے گی؟

این آر سی سے باہر رہ جانے والوں کی اکثریت مسلمان ہے۔ ہندو بھی اچھی خاصی تعداد میں ہیں۔ چنانچہ بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت نے ان ہندوؤں کو بچانے کا ایک حل تلاش کر لیا۔ جو مسلمان ہیں انھیں بی جے پی “گھس پیٹھیا” کہتی ہے اور جو ہندو ہیں انہیں “شررنارتھی” یعنی رفیوجی۔ گھس پیٹھیوں کو پارٹی ملک بدر کرنا چاہتی ہے جبکہ شررنارتھیوں کو شہریت سے نوازنا چاہتی ہے۔ اس کام کے لئے مرکزی حکومت نے 2016 میں ایک بل پیش کیا اور 2018 میں اسے لوک سبھا سے پاس کرانے میں کامیاب ہو گئی۔

فوٹو: پی ٹی آئی/nrcassam.nic.in

سپریم کورٹ نے این آر سی معاملے میں کہا-دعوےاوراعتراضات کو نپٹانے میں غیر جانبدارای سے کام لیں

سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ آسام میں این آر سی کو آخری شکل دینے کی 31 جولائی کی تایخ آگے نہیں بڑھائی جائے‌گی۔ یہ یقینی بنایاجانا چاہیے کہ این آر سی سے متاثر ہونے والے ہر شخص کو غیر جانبدارانہ سماعت کا موقع ملے۔

محمد ثناءاللہ (فوٹو بہ شکریہ: امن واڈوڈ / ٹوئٹر)

کارگل ہیرو محمد ثناء اللہ کو غیر ملکی قرار دے کر اہل خانہ سمیت حراستی کیمپ بھیجا گیا

صدر جمہوریہ ایوارڈ یافتہ ثناء اللہ کو آسام فارنرس ٹریبونل نے غیر ملکی قرار دیا ہے۔ان کو گولپاڑا کے حراستی سینٹر میں بھیجا گیا۔ثناء اللہ کے اہل خانہ نے بتایا کہ وہ ٹریبونل کے فیصلے کے خلاف گوہاٹی ہائی کورٹ میں اپیل کریں گے ۔

فوٹو بہ شکریہ : یوٹیوب ویڈیو

آسام: گوشت بیچنے کے شک میں بھیڑ نے مسلم بزرگ کو پیٹا، جبراً خنزیر کا گوشت کھلایا

سوشل میڈیا پر سامنے آئے اس معاملے کے ویڈیو میں مسلم بزرگ کو کیچڑ میں گھٹنوں کے بل بیٹھے دیکھا جاسکتا ہے اور بھیڑ پوچھتی نظر آرہی ہے کہ کیا اس کے پاس گائے کا گوشت بیچنے کا لائسنس ہے؟

سپریم کورٹ (فوٹو : پی ٹی آئی)

غیر ملکی شہریوں کی حراست کا معاملہ: سپریم کورٹ نے آسام حکومت کو لگائی پھٹکار

آسام میں غیر ملکی لوگوں کی حراست سے جڑے ایک معاملے کی سماعت کرتے ہوئے سپریم کورٹ نے پوچھا کہ غیر ملکی شہری کیسے مقامی آبادی کے ساتھ گھل-مل گئے اور ان کا پتا لگانے کے لئے ریاستی حکومت کیا کر رہی ہے۔ عدالت نے آسام کے چیف سکریٹری کو طلب کیا۔

آسام کے وزیراعلیٰ سربانند سونووال (فوٹو : فیس بک@SarbanandaSonowal)

آسام: اقتصادی بحران سے دوچار اخبارات نے 3 دن کے لئے سرکاری اشتہارات کا بائیکاٹ کیا

نارتھ ایسٹ نیوزپیپر سوسائٹی نے ایک پریس ریلیز جاری کرکے آسام کی سربانند سونووال حکومت کے ذریعے اسپانسر کسی بھی اشتہار، خبر یا تصویر کا استعمال نہیں کرنے کا اعلان کیا۔ آسام کے زیادہ تر اخبار اسی سوسائٹی کا حصہ ہیں۔

آسام کے وزیراعلیٰ سربانند سونووال(فوٹو : پی ٹی آئی)

آسام:  بی جے پی کے اقتدار میں آنے کے بعدریاست میں حکومت کے خلاف بغاوت کے 251 معاملے درج

آر ٹی آئی کارکن اور کسان رہنما اکھل گگوئی، ساہتیہ اکادمی ایورڈیافتہ ہیرین گگوئی اور صحافی منجیت مہنت کے خلاف بھی شہریت (ترمیم) بل کو لےکر دئے گئے بیان کے لئے حکومت کے خلاف بغاوت کا معاملہ درج کیا گیا ہے۔

این ڈی ایف بی کے بانی رنجن دیمری، فوٹو: پی ٹی آئی

آسام سیریل بلاسٹ معاملہ: این ڈی ایف بی کے بانی رنجن دیمری سمیت 9 کو عمر قید

3 اکتوبر2008 کو آسام کے 4 ضلعوں میں 11 سلسلہ وار دھماکے میں 87 لوگ مارے گئے تھے ۔ اس معاملے میں کلیدی ملزم دیمری کو بنگلہ دیش میں گرفتار کیا گیا تھا اور 2010 میں ہندوستان کے حوالے کر دیا گیا تھا۔

(فوٹو : پی ٹی آئی)

گزشتہ  10سال میں بنگلہ دیش سے نہیں ہوئی کوئی گھس پیٹھ: بی جے پی ترجمان

بی جے پی ترجمان سوپنل بروآ نے کہا کہ اقتصادی وجوہات سے بنگلہ دیشی ہندوستان نہیں آ رہے ہیں۔ یورپ اور سرحدی ملکوں میں ان کو کم سے کم 3000 روپے روز ملتے ہیں جبکہ ہندوستان میں وہ زیادہ سے زیادہ ہزار روپے ہی کما سکتے ہیں۔ ایسے میں وہ یہاں کیوں آئیں‌گے۔

فوٹو: پی ٹی آئی/nrcassam.nic.in

این آر سی معاملے میں سپریم کورٹ کا نیا فیصلہ ؛ اب 15دسمبر تک داخل کر سکتے ہیں اپنے اعتراض اور دعوے

چیف جسٹس رنجن گگوئی کی صدارت والی بنچ نے پہلے سے قابل قبول 10دستاویزوں کے علاوہ 5 اور ایسے دستاویزوں کو قبول کرنے کے اجازت دی ہے جن کو این آر سی کوآرڈینٹر نےشہریت کی تصدیق میں سختی کے مد نظر قبول کرنے سے منع کر دیا تھا۔

(علامتی فوٹو : دی وائر)

مرکز کاریاستوں کو حکم،غیر قانونی طور پر رہ رہے روہنگیا پناہ گزینوں کی نئے سرے سے پہچان کریں

حکومت ہند غیر قانونی روہنگیا پناہ گزینوں کے بارے میں ریاستوں سے جٹائے گئے بایوگرافک اعداد و شمار کو میانمار حکومت کے ساتھ شیئر کرے‌گی۔ اس کی بنیاد پر ان کی شہریت کی تصدیق کی جا سکے‌گی۔