آل انڈیا کسان سنگھرش کوآرڈینشن کمیٹی

نیتی آیوگ کے سابق نائب صدر اروند پن گڑھیا (فوٹو : پی ٹی آئی)

ہمارے مفاد میں ہے آئی سی ای پی، باہر رہے تو نہیں آئے‌ گی کوئی ملٹی نیشنل  کمپنی: اروند پن گڑھیا

اگست 2017 میں نیتی آیوگ سے استعفیٰ دینے والے اروند پن گڑھیا نے کہا کہ آپ آر سی ای پی سے باہر نہیں رہ سکتے ہیں کیونکہ اس کا مطلب ہوگا کہ ہم جو بھی ان 15 ممالک کے بازاروں میں برآمد کریں‌گے ان پر بھاری فیس لگے‌گی۔ وہیں، وہ بنا کسی روک-ٹوک‌کے اپنا سامان برآمد کریں‌گے۔ اس سے ہمارے برآمد کنندگان کو بہت نقصان ہوگا۔

تھائی لینڈ کے بنکاک میں تیسری آر سی ای پی کانفرنس کے دوران غیر ملکی رہنماؤں کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی(فوٹو بہ شکریہ: پی آئی بی)

آر سی ای پی معاہدے میں شامل نہیں ہوگا ہندوستان، کہا-ہمارے خدشات دورنہیں ہو ئے

ہندوستان اپنی مصنوعات کے لئے بازار تک رسائی کے معاملے کو زور و شور سےاٹھا رہا تھا ، جس کا حل نہیں نکالا جا سکا۔ آر سی ای پی میں دس آسیان ممالک اوران کے چھ آزاد کاروبای شراکت دار چین، ہندوستان، جاپان، جنوبی کوریا، آسٹریلیا اورنیوزی لینڈ شامل ہیں۔

wpsbU1ez

’آر سی ای پی سمجھوتے سے کروڑوں ملک فارمر برباد ہوجائیں گے‘

انٹرویو: تقریباً 250 کسان یونین کے سب سے بڑے مورچے آل انڈیا کسان سنگھرش کوآرڈینشن کمیٹی(اے آئی کے سی سی)نے ریجنل کمپریہنسواکانومک پارٹنر شب(آر سی ای پی)کاروباری معاہدے کے خلاف 4 نومبر کو پورے ملک میں مارچ نکالنے کا اعلان کیا ہے۔ تنظیم کے کنوینر وی ایم سنگھ سے بات چیت۔

Don`t copy text!