Criminal Cases

ہندو یودھا سنگٹھن  کے مہیش مشرا۔ (فوٹو بہ شکریہ: ٹوئٹر)

ایودھیا میں فسادات بھڑکانے کی کوشش کرنے والا کلیدی ملزم ہسٹری شیٹر اور اینٹی مسلم رہا ہے

گزشتہ دنوں ‘ہندو یودھا سنگٹھن’ سے وابستہ کچھ لوگوں نے سور کے گوشت کے ٹکڑے، مذہبی صحیفہ کے پھٹے ہوئے صفحات اور مسلمانوں کے خلاف لکھے کچھ خطوط ایودھیا کی کچھ مسجدوں اور مزاروں کے قریب پھینک کر فرقہ وارانہ ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی تھی۔ اس معاملے میں کلیدی ملزم مہیش مشرا مسلم مخالف رہا ہے۔ اس نے نہ صرف مسلمانوں کو قتل کرنے کی اپیل کی ہے بلکہ ان کے اقتصادی بائیکاٹ کی بھی اپیل کر چکا ہے۔

(علامتی تصویر: رائٹرس)

ایودھیا: مساجد اور مزار کے پاس قابل اعتراض چیزیں پھینکنے کے معاملے میں سات گرفتار

ایودھیا پولیس کے مطابق، کچھ سماج دشمن عناصر نے گوشت کے ٹکڑے، مذہبی صحیفے کے کچھ پھٹے ہوئے صفحات اور مسلمانوں کے لیے توہین آمیز خطوط شہر کی بعض مساجد اور مزار کے پاس پھینک کر فرقہ وارانہ ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی تھی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ گرفتار کیے گئے افراد ‘ہندو یودھا سنگٹھن’ سے وابستہ ہیں۔ اس کے ڈائریکٹر ہسٹری شیٹر مہیش مشرا ہیں۔

یوگی آدتیہ ناتھ کی تقریب حلف برداری کے دوران بی جے پی رہنماؤں کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی اور گورنر آنندی بین پٹیل۔ (تصویر: پی ٹی آئی)

یوپی کے کم از کم 22 وزیروں کے خلاف مجرمانہ معاملے درج: اے ڈی آر

ایسوسی ایشن فار ڈیموکریٹک ریفارمز اور اتر پردیش الیکشن واچ نے کہا ہےکہ یوپی میں حلف لینے والے 45 نئے وزیروں میں سے 22 نے اپنے خلاف مجرمانہ معاملوں کا اعلان کیا ہے اور ان میں سے زیادہ تر پر سنگین الزامات ہیں۔

باگھمارہ اسمبلی حلقہ  سے بی جے پی ایم ایل اے ڈھلو مہتو۔ (فوٹو بہ شکریہ: ٹوئٹر/@dhullu_mahto)

جھارکھنڈ: بی جے پی ایم ایل اے سمیت 13 لوگوں پر رنگداری وصول کرنے کا معاملہ درج

باگھمارہ اسمبلی حلقہ سے بی جے پی ایم ایل اے ڈھلو مہتو پر الزام ہے کہ وہ اپنے حامیوں کے ساتھ مبینہ طور پر کوئلہ سیکٹر میں ریلوے لائن بچھانے کے کام میں رنگداری کی مانگ کر رہے تھے۔مہتو پر ان کی ہی پارٹی کی ایک خاتون رہنما کا جنسی استحصال کرنے سمیت درجن بھر سے زیادہ مجرمانہ معاملے درج ہیں۔

مرکزی وزیر مملکت پرتاپ چندر سارنگی (فوٹو : پی ٹی آئی)

کیا وندے ماترم نہ کہنے والوں کو ہندوستان میں رہنے کا حق ہونا چاہیے: پرتاپ سارنگی

اڑیسہ کے بالاسور سے پہلی بار رکن پارلیامان بننے والے پرتاپ چندر سارنگی وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت میں مرکزی وزیر مملکت ہیں۔ پارلیامنٹ میں اپنی پہلی تقریر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ملک ٹکڑے ٹکڑے گینگ کو کبھی قبول نہیں کرے‌گا۔

مرکزی وزیر مملکت پرتاپ چندر سارنگی(فوٹو : پی ٹی آئی)

’اڑیسہ کا مودی‘ کہے جارہےمرکزی وزیر پرتاپ سارنگی کے خلاف درج ہیں 7 مقدمے

مودی حکومت میں مرکزی وزیر مملکت پرتاپ چندر سارنگی کے انتخابی حلف نامہ کے مطابق، ان کے خلاف ، فسادکرنے، مذہب کی بنیاد پر مختلف فرقوں کے درمیان نفرت کو بڑھاوا دینے،دھمکی اورجبراً وصولی کے الزامات کے تحت مقدمے درج ہیں۔

فوٹو: پی ٹی آئی

 وزیر اعظم مودی کے سیاست کو جرم سے آزاد کرنے کے وعدے کا کیا ہوا؟

نریندر مودی نے وزیر اعظم بننے سے پہلےبغیرکسی جانبداری کے ایک سال کے اندر جس پارلیامنٹ کو جرم سے آزاد کرنے کا وعدہ کیا تھا وہ پانچ سال بعد بھی پورا نہیں ہوا۔ اس دوران ان کی پارٹی کے کئی رکن پارلیامان اور وزراء پر سنگین الزام لگے مگر مجرمانہ مقدمہ چلانے کی بات تو دور، انہوں نے عام اخلاقیات کی بنیاد پر کسی کا استعفیٰ تک نہیں لیا۔

سپریم کورٹ (فوٹو : پی ٹی آئی)

سیاسی رہنماؤں  کے خلاف مجرمانہ معاملے:سپریم کورٹ نے بہار اور کیرل کو ہر ضلع میں اسپیشل کورٹ بنانے کی ہدایت دی

عدالت نے بہار اور کیرل کو ضرورت کے حساب سے اپنے اضلاع میں ایم پی اور ایم ایل اے کے خلاف زیر التوا معاملوں کی شنوائی کے لیے اسپیشل کورٹ بنانے کی آزادی دی ہے۔

Don`t copy text!