ادبستان

شور نہ کریں ، وکاس سو رہا ہے…

مبارک لفظ اصل میں ایک گالی ہے کیونکہ وہ اردو کا لفظ ہے اور آج کے زمانے میں اردو سے بڑی گالی اور کوئی نہیں ہے کیونکہ بیچاری یہی پیدا ہوئی اور پھر لاوارث ہو گئی۔

modi-twitter‘ نتیجہ ‘ اس لفظ سے میرا عجیب سا رشتہ ہے۔ مجھے اس کا مطلب ہندی کی کلاس میں کبھی نہیں سمجھ آیا۔ لیکن اس لفظ نے اپنا معنی مجھے تاریخ اور سائنس کی کلاس میں سمجھا دیا۔ تاریخ میں نتیجہ کی خوبصورت وضاحت ملتی ہے۔ اشوکا کے کلنگ کی جنگ کا نتیجہ، پانی پت کی تینوں لڑائیوں کے نتیجے، پہلی اور دوسری عالمی جنگ کے نتیجے۔ ‘ نتیجہ ‘ لفظ خود کا نتیجہ ہے۔

نتیجہ اصل میں ثبوت ہے،براہ راست کا۔ پربراہ راست  بھی تو آج کل اتنا ظاہر نہیں ہے۔ وہ بھی چھپا ہوا ہے، ٹنوں ملبہ کے نیچے۔ ملبہ پروپیگینڈا کا۔ جس کے پاس پیسہ اور طاقت ہے وہ یہ ملبہ بناکر، ظاہر کو چھپا سکتے ہیں۔

میرے ساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہوا، لیکن فیس بک پر چیزیں ٹٹولتےہوئے ایک فیس بک پوسٹ پڑھی اور بلاواسطہ اچانک، براہ راست  ہو گیا۔ یہ مضمون بھی اسی فیس بک پوسٹ سے نکلا ہے۔

تو فیس بک پوسٹ تھی ایک محترم کی، جن کا نام ہے، پیر ی مہیشور۔ میں ان کو جانتا نہیں ہوں۔ ‘ کریئرس 360 ‘نام کی کمپنی چلاتے ہیں۔ جو کہ مجھے ان کےفیس بک پروفائل سے پتا چلا۔ انہوں نے اپنی پوسٹ میں گزشتہ ہفتہ تو بڑی خوبصورتی اور آسانی سے پیش کیا ہے۔

یہاں میں ان کی ہی کہی ہوئی باتوں کو اپنے الفاظ میں پیش کروں‌گا۔ لیکن میں اس ہفتے کی میعاد کچھ اور دن بڑھاکر بات کروں‌گا۔

تو میں نے شروع میں نتیجےکی بات کی۔ آئیے، یہاں سے کان واپس پکڑتے ہیں۔ پھر اس کان کے نتیجے کی بات کرتے ہیں۔

سب سے پہلے ان نتائج  پر ایک معصوم سی نظر ڈالتے ہیں :

1۔ دیوالی پر مودی جی نے نہرو جیکٹ اتار، فوج کی کیمفلاز جیکیٹ پہن لی۔ 2019 کی جنگ کا بگل بجا دیا۔ ویسے تو ہم نے سنا تھا کہ فوج کی وردی کمائی جاتی ہے، لیکن مودی جی پردھان سیوک  ہیں، انھیں نہ کمانے سے کون روک سکتا ہے۔

مودی جی پہلے بھی دیوالی فوج کے ساتھ منا چکے ہیں۔ لیکن اس بار، ایک ساتھ، سام دام اور دنڈ بھید کی کمفلاز جیکٹ پہن‌کر کھڑے ہو گئے۔

2۔ تاج محل کو سفید سے سبز رنگ چڑھا دیا گیا۔ ہندوستان کی شان کہلانے والا تاج محل، بیچارا، بے گھر ہو گیا۔ اس کو پتا چلا کہ وہ ہندوستانی تہذیب کا حصہ نہیں ہے۔ وہ رونے لگا، اس کے آنسو دیکھ کر  پاس بہتی جمنا نے پوچھا، ‘ کیا ہوا؟ ‘وہ بولا، ‘ دوست میں تو یہیں پیدا ہوا ہوں، میں اب کہاں جاؤں؟ ‘ تو جمنا نے اس کو دلاسا دیا، ‘ تو نے گنگا کا نام سنا ہے؟ ‘

تاج بولا، ‘ہاں ‘۔ تو جمنا بولی، ‘ گنگا اور جمنا مل‌کر ایک تہذیب بنتی ہے، تو اسی کا حصہ ہے۔ ‘تاج تو جمنا کی اس بات سے کنونس ہو گیا پر لگتا ہے بہت سارے لوگ اب بھی تاج کو غیر ثابت کرنے کی جی توڑ کوشش میں لگے ہوئے ہیں۔

3۔ رام للا اور ایودھیا، ابھی کچھ سالوں سے غائب تھے۔ آس پاس رہتے تھے، لیکن سوتیلے بھائی بہنوں کی طرح۔ وکاس سگا بھائی تھا، اس لئے اس کی بات زیادہ ہوتی تھی۔ وکاس کلاس میں فرسٹ آیا، وکاس کی نوکری لگ گئی۔ وکاس سے سب جلتے تھے۔ وکاس نے سب کی چارپائی کھڑی کر رکھی تھی۔ مگر تبھی ایک چوٹ ہو گئی۔

وکاس گجرات میں کہیں گھوم رہا تھا اور وہاں سے خبر آئی کہ ‘ وکاس پاگل ہو گیا ہے ‘۔ گجراتی میں ‘ وکاس گانڈو تھایو چھے۔ ‘اب کیا تھا، گھر میں ہُڑدنگ مچ گیا۔ اپنا سگا بھائی پاگل ہو گیا تھا، تو اس وجہ سے سوتیلے بھائی بہنوں کو واپس لانا پڑا۔

4۔ مودی جی نے ایک اور بات کہی جو دھیان دینے لائق ہے۔ ‘ جی ایس ٹی میرے اکیلے کا فیصلہ نہیں ہے۔ ‘ دیکھو دوستو، جب جی ایس ٹی کا تحفہ ہندوستان کو دیا گیا تب قانون سازمجلس کی نصف شب سیشن بلاکر، جیسے کہ ہندوستان کو واپس آزاد کیا تھا، لیکن اب جب جی ایس ٹی پر عوام سر پھٹّوّل کرنے کو اتارو ہے تو اکھاڑے بدل گئے ہیں۔

اکثر فلموں میں ہدایت کار ایسی باتیں کرتے ہیں، جو فلم چل گئی تو ساری تعریف میری، جو بےعزتی ہوئی تو سب آپس میں برابر بانٹ لیں‌گے۔ جیسے آج کل بچّے کہتے ہے نا: مودی جی، ‘ لول ‘۔

5۔ بی جے پی کے اقتدار میں تقریباً ساڑھے تین سال سے زیادہ گزر جانے کے بعد بوفورس کی فائلیں کھل رہی ہیں۔ سی بی آئی کی تفتیش چل رہی بتائی گئی۔ فلم دوستانہ کا ایک نغمہ ہے، ‘ کس طرف ہے آسمان، کس طرف زمین ؛ خبر نہیں، خبر نہیں۔ ‘

اسی کی طرز پر، ‘ 2G، کولگیٹ، CWG، چاپر اسکیم کا کیا ہوا ؛ خبر نہیں، خبر نہیں۔ ‘ پر ایک بات تو صاف ہے۔ بوفورس ہوا تھا 1987 میں اور آج 2017 میں اس کی فائلیں کھل رہی ہیں۔ اب بس تیس سال اور انتظار کیجئے، 2G وغیرہ کی فائلیں بھی کھل جائیں‌گی۔ فیصلہ کب آئے‌گا، اس کا حساب ہم بوفورس کے فیصلے سے لگا لیں‌گے۔

6۔ پانچویں پوائنٹ سے جڑی ایک اور چھوٹی سی اور معمولی خبر ہے، سکھرام جی یاد ہیں، اپنے ٹیلی کام اسکیم والے، جن کو کورٹ نے 3 سال کی سزا بھی سنائی تھی۔ انہوں نے اور ان کے بیٹے نے مل‌کر بی جے پی کا ہاتھ پکڑ لیا ہے۔ بی جے پی وہ گنگا ہے جس میں جاتے ہی سب کے گناہ دھل جاتے ہیں۔ باقی آپ لوگ خود عقلمند ہیں۔

میری اپنی ریاست راجستھان میں، جہاں میں پیدا ہوا، پلا  بڑھا، سنا ہے وہاں ایک نیا قانون آنے والا ہے، جس کے تحت، رکن پارلیامنٹ، ایم ایل اے، جج اور افسروں کے خلاف تفتیش کرنا نہ صرف مشکل ہوگی بلکہ یہ قانون ان کو تحفظ بھی مہیّا کرائے‌گا۔

7۔ سات ستمبر کو منظور مجرمانہ قانون (راجستھان ترمیم) فرمان، 2017 کے مطابق کام کے دوران، ان لوگوں کے خلاف کورٹ کے ذریعے بھی ایف آئی آر درج نہیں کرائی جا سکتی۔ اس کے لئے حکومت کی اجازت ضروری ہوگی۔ حالانکہ اگر حکومت اجازت نہیں دیتی ہے تب 180 دن کے بعد کورٹ کے ذریعے ایف آئی آر درج کرائی جا سکتی ہے۔

حد تو یہ ہے کہ میڈیا کو بھی ان لوگوں کے بارے میں بات کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ اگر غلطی سے خبر چھاپ دی تو 2 سال تک کی سزا کا اہتمام ہے۔ دیکھیے کتنی بہترین ڈیموکریسی کھیلی جا رہی ہے۔ پوری کی پوری سرکاری ٹیم کو امیونٹی دے دی گئی ہے۔

سرکاری لیول پر بگ باس کھیلا جا رہا ہے۔ اور سنا ہے یہ تو ابھی بس پہلاتجربہ ہے جس کی ابتدا راجستھان سے کی جا رہی ہے۔ لوگوں کا موڈ چیک کر رہے ہیں۔ اگر ایسے فسطائی قانون کو لوگوں نے قبول‌کر لیا تو تو باقی ہندوستان میں بھی یہ نافذ ہوگا۔

8۔ ایک اور چھوٹی سی خبر ہے۔ سوشل میڈیا سے پتا چلا کہ ‘دیوالی مبارک ‘ کہنا اتنا بڑا سنگین جرم ہے کہ اس بات پر آپ کی دوستی ٹوٹ سکتی ہے۔ مبارک لفظ اصل میں ایک گالی ہے کیونکہ وہ اردو کا لفظ ہے اور آج کے زمانے میں اردو سے بڑی گالی اور کوئی نہیں ہے کیونکہ بیچاری یہی پیدا ہوئی اور پھر لاوارث ہو گئی۔

ویسے ہیپی دیوالی کہہ سکتے ہیں۔ لیکن ،  پھر بھی آپ کی دوستی کے مارکس کاٹ لئے جائیں‌گے۔ اب سے ہر چیز کہنے کا صرف ایک طریقہ ہے، دیوالی کے لئے ‘ شبھ دیوالی۔ ‘

9۔ واڈرا کی بھی فائلیں واپس کھلی ہیں۔ اب آپ یہ کہیں‌گے کہ واڈرا پر تو کاروائی ہونی چاہیے؟ تو میں کہوں‌گا ٹائمنگ دیکھیےجناب۔ یہ کسی کی بےایمانی کا نتیجہ نہیں ہے، کسی اور کی بےایمانی کا نتیجہ ہے۔

10۔ آتش بازی سے لےکر کاجو کتلی تک میں آج کل مسلمانوں کی طرح ‘ہندو خطرے میں ہے۔ ‘ بچپن میں سنتے تھے، ہر وقت مسلمان خطرے میں رہتا تھا۔ ڈر کے مارے لگتا تھا اللہ بس مجھے ہی دیکھ رہا ہے۔ مجھ میں کچھ اوپر والے کا اسپیشل انٹریسٹ ہے۔

پر آج کل نیچے والوں میں بڑی فکر۔ ہندو بڑے خطرے میں ہیں۔ جیسےجیسے بڑے ہوئے تو یہ سمجھا کہ جب ہم ڈرے ہوئے ہوتے ہیں، تو ملّامولوی کی سب سنتے ہیں۔ ورنہ ان لوگوں کی کون سنتا ہے۔ پر آج کل ہندوؤں میں یہ ڈر سوٹ اور ٹائی پہن‌کر ٹی وی اسٹوڈیو میں بیٹھے لوگ پھیلا رہے ہیں۔ سوچیے، ہندوؤں میں بھی سوٹ ٹائی والے مولانا ہیں۔

11۔ اور آخر میں، ابھی میرسل نام کی ایک تمل فلم ریلیز ہوئی ہے۔ جس میں ایکڈائیلاگ صرف ایک ڈائیلاگ ہے، جو جی ایس ٹی کے بارے میں بات کرتا ہے اور اس نے حکومت ہند کے گلیارے کو ہلا رکھاہے۔

کچھ خاص نہیں ہے اس ڈائیلاگ میں، آپ یا تو اس بات سے متّفق ہو سکتے ہیں یا نہیں۔ لیکن حکومت ہند نے ہدایت دی ہے کہ اس سینسر سے پاس ہوئی فلم کے اس ڈائلاگ کو واپس سینسر کیا جائے۔ مطلب، بات بھی مت کرو، ورنہ جوتے پڑیں‌گے۔ سڑک پر نکلوگے تو گولی پڑے‌گی۔ جیسے کسانوں کو ماری تھی مدھیہ پردیش میں۔ لیکن اب اگر بات بھی کی، تو تمہارا منھ نوچ لیں‌گے۔

تو یہ تو ہو گئے نتیجے۔ پر آئیے ایک بار نظر ڈالتے ہیں، ایک مثالی ہندوستان میں، جہاں اگر مثالی اسکیم نہیں ہوتی تو مثالی صلاح و مشورہ کن باتوں پر ہو رہا ہوتا :

ہم بھوک مری میں سو ویں نمبر پر آ گئے ہیں۔ جس ملک میں اتنی بھوک مری ہو وہاں اگر یہ خبر خبر نہ ہو تو ہم سب بےخبر ہیں۔

نوٹ بندی بھی کچھ ندارد ہے۔ سوچیے اگر نوٹ بندی کامیاب ہوتی تو ابھی 8 نومبر کو اس کی سال گرہ کے لئے حکومت 4،000 کروڑ کے اشتہار نکال چکی ہوتی۔ شاید پھر قانون سازمجلس کا نصف شب اجلاس بلوا لیتی۔

وہ 2 کروڑ جاب مل گئے کیا؟ میرے جوان دوستو، وہ جن جابس کی وجہ سے تم نے بی جے پی کو ووٹ دیا تھا، وہ سارے جابس ٹھیک چل رہے ہیں نا؟ تھوڑے پیسے گھر بھی پہنچادینا۔

میرے کسان بھائیو۔ تم کو تو اب خودکشی بھی کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔ حکومت آج کل تم کو خود گولی مار دیتی ہے۔ چلو اس بہانے زہر کا خرچہ بھی ختم ہوا۔

اور وہ جی ڈی پی کا کیا ہوا؟ وہ جو گر پڑ رہی تھی۔ وہ اٹھ‌کر دوڑنے لگ گئی کیا؟ کوئی خبر نہیں آئی اس کی بھی۔

اور اکثر آپ نے دیکھا ہوگا کہ مودی جی پبلک میں جاکر یہ کہہ دیتے ہیں یہ لوگ ان کو کام نہیں کرنے دے رہے ہیں۔ یہ لوگ کون ہیں؟

یہ کوئی 46 لوگ ہیں، یہ اتنے بھی نہیں ہیں کہ مخالف کا رہنما چننے کے لئے کوالیفائی بھی کر سکیں؟ مودی جی جو آج رائےعامہ کے پہاڑ پر بیٹھے ہیں۔ این ڈی اے کی 335 سیٹیں ہیں جس میں اکیلی بی جے پی کی 275۔ لیکن مودی جی بڑے پریشان ہیں ان 46 نکمّے لوگوں سے۔

تو یہ ہے ہندوستان کے آج کل کا سیاسی کاروبار۔ گجرات کے الیکشن بس سر پر ہیں۔ ترقی تعطیل پر ہے اور ذہنی تباہی ترقی پر ہے۔ جیسے، ایک دو ہفتے میں 2014 کا سارا مینیفیسٹو ردی کی قیمت بیچ دیا گیا ہے اور بھگوا رنگ‌کے ایشین پینٹ کے کروڑوں ڈبے خرید لئے ہیں۔

پوتائی چالو ہے، 2019 تک ساری دیواریں اور چہرے پوت دئے جائیں‌گے۔ جو نہیں پوتیں‌گے، ان کے منھ کے لئے اینٹی نیشنل پینٹ کے رنگ کو چین سے در آمد کرنے کا آرڈر دے دیا گیا ہے۔

اب اتنے سیدھے اور گھماکر کان پکڑ چکا ہوں کہ بس ایک بات کہنے کو بچی ہے، اگر اب بھی آپ لوگوں کو سمجھ نہیں آ رہی ہے کہ میں کیا کہہ رہا ہوں۔ تو جو میں ابتک مودی جی سے کہہ رہا تھا، وہ آپ سب لوگوں سے کہہ رہا ہوں میرے پیارے، بھولےبھالے ہندوستان والو، ‘ لول۔ ‘

(داراب فاروقی اسکرپٹ رائٹر  ہیں اور فلم ڈیڑھ عشقیہ کی کہانی لکھ چکے ہیں۔)

  • Muhammad Aamir

    Lol