Ministry of Health and Family Welfare

0905 KT.00_01_27_20.Still013

تیزی سے گھٹ رہی ہے مسلمانوں کی آبادی، منہ کے بل گرا سنگھی پروپیگنڈہ

ویڈیو: صحت اور خاندانی بہبود کی وزارت کی جانب سے کیے گئے نیشنل فیملی ہیلتھ سروے (این ایف ایچ ایس ) کے اعداد و شمار کے مطابق، گزشتہ دو دہائیوں میں تمام مذہبی کمیونٹی میں مسلمانوں نے کی آبادی میں سب سے زیادہ گراوٹ دیکھی گئی۔ کمیونٹی کی فرٹیلیٹی یعنی تولیدی زرخیزی کی شرح 2019-2021 میں گر کر 2.3 ہو گئی، جو 2015-16 میں 2.6 تھی۔ اس ایشو پر الیکشن کمیشن کے سابق سربراہ ایس وائی قریشی سے عارفہ خانم شیروانی کی بات چیت۔

(السٹریشن: سینڈی ملر/انسپلیش)

مسلمانوں کی آبادی کنٹرول کرنے کا نیا شوشہ

حیرت کی بات ہے کہ ان کی پارٹی کے ایک اہم لیڈر جب اس مجوزہ قانون کا اعلان کر رہے تھے اور بتا رہے تھے کہ اس سے مسلمانوں کی آبادی کو کنٹرول کیا جائےگا اس لیڈر کے اپنے آٹھ بچے ہیں ۔ خود اترپردیش اسمبلی میں اس وقت بی جے پی کے 152اراکین کے تین سے زیادہ بچے ہیں۔

اتر پردیش کے وزیراعلی یوگی آدتیہ ناتھ (فوٹو : پی ٹی آئی)

اتر پردیش: وزیر اعلیٰ یوگی بڑھتی آبادی کے لیے نہیں انتخابات کے لیے فکرمند ہیں

اسمبلی انتخاب سےمحض چندہ ماہ قبل وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ نے مجوزہ آبادی قانون کو ضروری بتاتے ہوئے کہا کہ بڑھتی آبادی صوبے کی ترقی میں رکاوٹ ہے۔ لیکن کیایہ رکاوٹ اچانک رونما ہوئی ہے ؟ اگر نہیں، تو اس کو لےکراس وقت مناسب ا قدامات کیوں نہیں کیے گئے، جب ان کی حکومت کے پاس اس کو آگے بڑھانے کا وقت تھا؟

‘اتر پردیش نئی آبادی پالیسی 2021-2030’ جاری کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ  یوگی آدتیہ ناتھ۔ (فوٹو: پی ٹی آئی)

یوپی: بی جے پی کے 50 فیصد ایم ایل اے کے تین اور اس  سے زیادہ  بچے، ہوگی مجوزہ آبادی قانون کی خلاف ورزی

یوگی حکومت کی جانب سے مجوزہ آبادی کنٹرول قانون کے تحت دو سے زیادہ بچے ہونے پرسرکاری نوکریوں میں درخواست دینے سے لےکر مقامی بلدیاتی انتخابات لڑنے پر بھی روک ہوگی۔ اگراس بنیاد پرصوبے کے بی جے پی ایم ایل اے کاجائزہ لیا جائےگا تو ان کے پچاس فیصدی رہنمااس کسوٹی پر کھرے نہیں اتریں گے۔

فوٹو: رائٹرس

کورونا وائرس: سابق ہیلتھ سکریٹری نے کہا-ہندوستان سمیت دنیا نے تحقیق اور ترقی پر توجہ نہیں دی

سابق ہیلتھ سکریٹری کےسجاتا راؤ نے کہا ہے کہ غذائی قلت اور صحت مند طرز زندگی کے فقدان کی وجہ سے کافی تعداد میں لوگوں کے اندر بیماری سے لڑنے کی طاقت کم ہے۔ ایسے میں بیماریوں کو لےکرمستقل تحقیق پر توجہ دینے کی ضرورت ہے، جس کی ہمارے ملک میں کافی کمی ہے۔

فوٹو بہ شکریہ، فیس بک

اتر پردیش میں پرائمری ہیلتھ سروس خستہ حال، بنا بجلی پانی کے چل رہے ہیں ہاسپٹل

لوک سبھا میں وزارت صحت کی جانب سے دی گئی جانکاری کے مطابق ملک بھر میں پرائمری ہیلتھ سروس کی صورتحال اطمینان بخش نہیں ہے۔ کئی ریاستوں میں پرائمری ہیلتھ سینٹر ڈاکٹروں کی کمی سے جوجھتے ہوئےبجلی، پانی، بیت الخلاجیسی بنیادی سہولیات کے بغیر کام کر رہےہیں۔

(فوٹو :رائٹرس)

سپریم کورٹ نے غلط ہپ امپلانٹ معاملے میں جانسن اینڈ جانسن کے خلاف معاملہ بند کیا

مشہور فارما کمپنی جانسن اینڈ جانسن پر الزام ہے کہ اس کی ہپ امپلانٹ ڈیوائس کی وجہ سے دنیا بھر کے کئی مریضوں پر کافی برا اثر پڑا ہے۔ ہندوستان میں کمپنی کے غلط ہپ امپلانٹ ڈیوائس کی وجہ سےتقریباً 3600 مریض بری طرح متاثر ہوئے ہیں اور کم سے کم 4 لوگوں کی موت ہو گئی ہے۔

 (علامتی فوٹو : رائٹرس)

جئے پور میں زیکا وائرس کا قہر نہ روک پانے میں سرکاری بد انتظامی کا بڑا رول

ڈیپارٹمنٹ آف میڈیکل، ہیلتھ اینڈ فیملی ویلفیئر جئے پور میں زیکا وائرس پر کنٹرول کا دعویٰ کر رہا ہے، لیکن سرکاری اعداد و شمار کے مطابق اس کی چپیٹ میں آنے والے لوگوں کی تعداد 130 سے زیادہ ہو چکی ہے۔

(فوٹو :رائٹرس)

حکومت کو تھی جانسن اینڈ جانسن کی گڑبڑی کی جانکاری، دو سال بعد کیا بین، ہزاروں لوگ متاثر

فارما کمپنی جانسن اینڈ جانسن نے 24 اگست 2010 کو ہی دنیا بھر سے اپنی ناقص ہپ انپلانٹ ڈیوائس کو واپس لے لیا تھا لیکن ہندوستانی امپورٹروں نے اس پر پابندی لگانے اور لائسنس رد کرنے میں قریب دو سال لگا دیے۔

(علامتی فوٹو : رائٹرس)

دہلی ہائی کورٹ نے پوچھا ؛ حکومت ایچ آئی وی مریضوں سے امتیازی سلوک پر روک تھام قانون کو کیوں نوٹیفائڈ نہیں کر رہی ؟

دہلی ہائی کورٹ نے وزارت صحت اور نیشنل ایڈز کنٹرول آرگنائزیشن کو ایچ آئی وی سے متاثر لوگوں کے حقوق کی حفاظت کے لئے بنے قانون کا نوٹیفکیشن فوراً جاری کرنے سے متعلق نوٹس جاری کیا ہے۔

Photo: Reuters

امراض قلب اور کڈنی سے متعلق بیماریوں کے ماہر ڈاکٹروں کی بھاری کمی

پارلیامنٹ کی ایک کمیٹی نے پایا کہ امراض قلب کے چار ہزار ڈاکٹر ہیں جبکہ ان کی تعداد 88 ہزار ہونی چاہیے۔ ذیابیطس کے ماہرین کی تعداد محض 650 ہے جبکہ تقریباً 28 ہزار ماہرین کی ضرورت ہے۔ نئی دہلی:پارلیامنٹ کی ایک کمیٹی کی رپورٹ میں ہندوستان میں […]

Don`t copy text!